Pakistn Film Magazine in Urdu/Punjabi



Pakistan Film History

Pheray (1949)

Pakistan Film Magazine presents detailed Urdu/Punjabi article on the first released Pakistani Punjabi film Pheray (1949)..

پھیرے

فلم پھیرے (1949) ، پاکستان کی پہلی پنجابی ، پہلی نغماتی اور پہلی سپرہٹ فلم تھی
فلم پھیرے (1949)
پاکستان کی پہلی پنجابی،
پہلی نغماتی اور
پہلی سپرہٹ فلم تھی

پاکستان کی پہلی پنجابی ، پہلی نغماتی اور پہلی سپرہٹ فلم پھیرے ، جمعرات 28 جولائی 1949ء کو عیدالفطر کے مبارک دن لاہور کے پیلس سینما میں ریلیز ہوئی اور مسلسل چھ ماہ تک چلنے کے بعد پاکستان کی پہلی سلور جوبلی فلم قرار پائی تھی۔

قیام پاکستان کے بعد پہلی پنجابی فلم

قیام پاکستان کے بعد ریلیز ہونے والی پہلی پنجابی فلم چمن (1948) ، ہفتہ 7 اگست 1948ء کو عیدالفطر کے دن نمائش کے لیے پیش ہوئی تھی۔ اسی دن پاکستان کی بنی ہوئی پہلی اردو فلم تیری یاد (1948) بھی ریلیز ہوئی تھی۔

شوری پکچرز کی نغماتی پنجابی فلم چمن (1948) ، "بھائیا جی" کے نام سے شوری فلم سٹوڈیوز (شاہ نور فلم سٹوڈیو) ، ملتان روڈ لاہور میں بن رہی تھی لیکن تقسیم کے فسادات میں جب ہندوؤں اور سکھوں کو مار بھگایا گیا تو فلمساز اور ہدایتکار روپ کے شوری نے اس فلم کا باقی ماندہ کام بمبئی میں جا کر مکمل کیا۔ ان کی اداکارہ بیوی ، مینا شوری ، ہیروئن جبکہ اوم پرکاش نے مرکزی کردار ادا کیا تھا۔

فلم چمن (1948) کے دو سدا بہار گیت تھے "ساری رات تیرا تکنی آں راہ۔۔" اور "چن کتھاں گزاری اے رات وے۔۔" یہ نغماتی فلم ، ایک بھارتی پنجابی فلم کے طور پر لاہور کے قیصر سینما میں ریلیز ہوئی اور بڑی کامیاب ہوئی تھی۔

فلم پھیرے (1949) کی غیر معمولی کامیابی

پاکستان کی پہلی پنجابی اور نغماتی فلم پھیرے (1949) کی کامیابی غیر معمولی تھی۔ قبل ازیں ، پاکستان کی پانچوں ریلیز شدہ فلمیں اردو زبان میں تھیں لیکن ان میں سے کوئی ایک فلم بھی کامیاب نہیں ہو سکی تھی۔ اس کی ایک وجہ بھارتی فلموں کی عام نمائش بھی تھی۔ تقسیم کے بعد 1954ء تک بھارتی فلمیں آزادانہ ریلیز ہوتی رہیں اور ان پر مکمل پابندی 1965ء کی جنگ کے وقت لگائی گئی تھی۔

1949ء میں بھارتی فلموں کا گولڈن پیریڈ شروع ہو چکا تھا اور ہر شعبے میں بڑے بڑے فنکار سامنے آئے تھے۔ دلیپ کمار ، راج کپور ، اشوک کمار ، نرگس ، مدھو بالا اور ثریا وغیرہ بام عروج پر پہنچ گئے تھے۔ اس سال برسات ، انداز ، محل ، دل لگی اور دلاری جیسی بڑی بڑی نغماتی ہندی/اردو فلمیں ریلیز ہوئیں۔ ان کے مقابلے میں کسی پاکستانی فلم کا اس دور میں سلور جوبلی کرنا ، 1970/80 کی دھائیوں کی ڈائمنڈ جوبلی کے برابر تھا۔

اسی سال پہلی بھارتی پنجابی فلم لچھی (1949) بھی ریلیز ہوئی جو فلم پھیرے (1949) کی اصل مدمقابل تھی۔ یہ فلم ، بھارتی پنجابی فلموں کی سب سے کامیاب گلوکارہ شمشاد بیگم کے ایک سدا بہار گیت "میری لگدی کسے نہ ویکھی تے ٹٹدی نوں جگ جان دا۔۔" کی وجہ سے یادگار ہے۔ یہی پہلی بھارتی پنجابی فلم تھی جس میں لتا منگیشکر اور محمدرفیع کے گیت بھی تھے۔ لتا نے اندازاً 20 پنجابی فلموں میں 80 کے قریب گیت گائے جبکہ رفیع صاحب نے اڑھائی سو کے قریب پنجابی گیت گائے تھے۔ ہنس راج بہل سب سے کامیاب موسیقار تھے اور عزیز کاشمیری نے بے شمار لازوال پنجابی گیت لکھے تھے۔

پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے (1949) کی غیر معمولی کامیابی کو سمجھنے کے لیے یہ جاننا بھی ضروری ہے کہ مادری زبان کی جو اہمیت ہوتی ہے ، وہ دنیا کی کسی دوسری زبان کی ہو ہی نہیں سکتی۔ جو تعلیم اور تفریح ، مادری زبان میں ممکن ہے ، وہ کسی قومی ، الہامی یا بین الاقوامی زبان میں ممکن ہی نہیں۔ اتنی سادہ اور عام فہم سی بات موٹی عقل کے متعصب اور تنگ نظر لوگوں کی سمجھ میں آ ہی نہیں سکتی۔

اگست 1949ء میں لاہور کے سینماؤں پر فلمیں

نمبر فلم زبان سال ساختہ سینما
1 پھیرے پنجابی 1949 پاکستانی پیلس
2 دو کنارے اردو 1949 پاکستانی ریجنٹ
3 لچھی پنجابی 1949 بھارتی قیصر
4 کنیز ہندی/اردو 1949 بھارتی رتن
5 دل لگی ہندی/اردو 1949 بھارتی رٹز ، ریوالی
6 سانوریا ہندی/اردو 1949 بھارتی کیپیٹل
7 بچ کے رہنا ہندی/اردو 1949 بھارتی نگار
8 نیکی اور بدی ہندی/اردو 1949 بھارتی صنوبر
9 بازار ہندی/اردو 1949 بھارتی نشاط
10 درد ہندی/اردو 1948 بھارتی پیراماؤنٹ
11 سنجوگ ہندی/اردو 1943 بھارتی اوڈین
12 پکار ہندی/اردو 1939 بھارتی روز
13 The Paleface

انگلش

1948 امریکی ریگل
14 Hollow Triumph

انگلش

1948

امریکی

پلازہ

فلمی گیتوں کی اہمیت

ہماری فلموں میں سب سے زیادہ اہمیت فلمی گیتوں کو حاصل رہی ہے۔ اداکاروں کی مقبولیت وقتی ہوتی تھی لیکن فلمی گیتوں کی مقبولیت دائمی رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ماضی کی بیشتر فلمیں اپنے اداکاروں یا کرداروں کے بجائے گیتوں کی وجہ سے یاد رکھی جاتی ہیں۔

پاکستان کی پہلی میوزیکل فلم پھیرے (1949) کی کامیابی کی سب سے بڑی وجہ اس کے سدابہار اور مقبول عام گیت تھے۔ عظیم موسیقار ، بابا جی اے چشتی نے مدھر دھنوں کے علاوہ بابا عالم سیاہ پوش کے ساتھ مل کر متعدد سپرہٹ گیت خود بھی لکھے جنھیں گانے کا اعزاز ، منور سلطانہ اور عنایت حسین بھٹی کو حاصل ہوا۔ یہ روایت بھی ہے کہ بابا چشتی نے اس فلم کے سات گیت ایک ہی دن میں لکھے، کمپوز کیے اور ریکارڈ کروا دیے تھے۔

فلم پھیرے (1949) کی تکمیل

1930/40 کی دھائیوں میں متحدہ ہندوستان کے کامیاب اداکار ، فلمساز اور ہدایتکار ، نذیر ، اپنی 1940 کی دھائی کی کامیاب اداکارہ بیوی ، سورن لتا کے ساتھ وطن واپس آئے تو نوزائیدہ مملکت پاکستان میں اپنی ہی بنائی ہوئی پہلی پنجابی فلم پھیرے (1949) میں ہیرو اور ہیروئن کے کردار کیے۔ یہ ان دونوں کی اولین پنجابی فلم بھی تھی۔ میاں بیوی کی اس جوڑی کی دوسری پنجابی فلم لارے (1950) بھی ایک بڑی اعلیٰ پائے کی نغماتی فلم تھی۔

بتایا جاتا ہے کہ فلم پھیرے (1949) ، مسلم ٹاؤن لاہور کے پنچولی فلم سٹوڈیو میں بنائی گئی جہاں پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد (1948) کی تکمیل بھی ہوئی تھی۔ یہ فلمی نگار خانہ بعد میں نذیر صاحب کو الاٹ ہوا اور انھوں نے اس کا نام "پنجاب آرٹ سٹوڈیو" رکھا تھا۔

لیلیٰ مجنوں نذیر اور سورن لتا ، فلم لیلیٰ مجنوں (1945) میں
نذیر اور سورن لتا ، فلم لیلیٰ مجنوں (1945) میں

فلم پھیرے (1949) کے ہدایتکار کے طور پر مجید کا نام دیا گیا تھا لیکن اصل فلم ڈائریکٹر نذیر خود تھے جن کے کریڈٹ پر تقسیم سے قبل لیلیٰ مجنوں ، گاؤں کی گوری (1945) اور وامق عذرا (1946) جیسی بڑی بڑی فلمیں تھیں۔ وہ ، خاموش فلموں کے دور کے فنکار تھے۔ پہلی فلم مسٹیریس بینڈٹ (1931) تھی جو لاہور میں بنائی گئی تھی۔ پاکستان میں 15 اور تقسیم سے قبل کی پچاس سے زائد فلموں میں کام کیا۔ درجن بھر فلمیں بطور ہدایتکار ملتی ہیں۔

فلم پھیرے (1949) کی کہانی مستری غلام محمد کی تھی جو ایک میک اپ آرٹسٹ تھے۔ متعدد فلموں کی کہانیاں ان کے کریڈٹ پر تھیں لیکن فلمی اشتہارات پر کہانی سعیدہ بانو یعنی سورن لتا سے منسوب تھی جو فلم کی ہیروئن بھی تھی۔

سورن لتا نے تقسیم سے قبل دو درجن فلموں میں کام کیا جن میں بلاک باسٹر فلم رتن (1944) بھی تھی جو 1940 کی دھائی کی ایک ہزار سے زائد فلموں میں بزنس کے لحاظ سے دوسرے نمبر پر تھی۔ پاکستان میں سورن لتا کی ڈیڑھ درجن فلموں میں سے نوکر (1955) ، ایک سپرہٹ گولڈن جوبلی فلم تھی۔

فلم پھیرے (1949) کے مکالمے اور متعدد گیت بابا عالم سیاہ پوش کے لکھے ہوئے تھے۔ عکاس کے طور پر رضا میر کا نام آتا ہے جو پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد (1948) کے سینماٹوگرافر بھی تھے۔

فلم پھیرے (1949) کی گیتوں بھری کہانی

سورن لتا
سورن لتا
رانی
نذیر
نذیر
جانی
زینت
زینت
لچھی
نذر
نذر
چھجو
علاؤالدین
علاؤالدین
راجو
ایم اسماعیل
ایم اسماعیل
چوہدری لچھو

فلم پھیرے (1949) کے ہیرو نذیر (جانی) ، اپنے ایک دوست نذر (چھجو) کے ساتھ اپنے گاؤں میں بے فکری کی زندگی گزار رہے تھے۔ ایک مقابلے میں ان کا پالتو جانور بھیڈو ، (بھیڑ کی تذکیر) ، گاؤں کے چوہدری کے بیٹے کے بھیڈو سے مقابلہ جیت جاتا ہے لیکن ایک امیر آدمی سے جیتنے کے "جرم" میں اسے گاؤں سے دیس نکالا مل جاتا ہے۔

نذیر ، اپنے دوست نذر اور اپنی ماں کے ساتھ دوسرے گاؤں ہجرت کر جاتا ہے جہاں اس کا سامنا مقامی چوہدری کی بیٹی سورن لتا (رانی) سے ہوتا ہے۔ وہ "باگاں دی مورنی۔۔" بن کر باغ باغیچوں میں ناچ گا کر جوانی کی موج بہار سے لطف اندوز ہورہی ہوتی ہے۔ ایسے میں اس کا سامنا ہیرو سے ہوتا ہے جو اسے "سپ دی ٹوہر نہ ٹریئے ، نی کڑیئے۔۔" گاتے ہوئے حال دل سنانے کی کوشش کرتا ہے۔

چند مزید ملاقاتوں کے بعد ہیرو کی کوششیں بارآور ہوتی ہیں اور ہیروئن ، ہیرو کو منور سلطانہ اور عنایت حسین بھٹی کے گائے ہوئے اور بابا چشتی کی دھن کے علاوہ لکھے ہوئے پاکستانی فلموں کے پہلے سپرہٹ دوگانے کی صورت میں عشق و محبت میں متوقع نشیب و فراز سے خبردار کرتے ہوئے گاتی ہے:

  • او ، اکھیاں لاویں نہ ، او ، فیر پچھاویں نہ ، انجانا۔۔
    او ، تو نئیں جان دا ، عشقے دے معاملے ، او بلے او۔۔

ہیرو بڑا ثابت قدم ہوتا ہے اور ہیروئن کو اپنی وفا کا یقین دلاتے ہوئے گاتا ہے:

  • نی گل سن سوہنیے ، نی ہائے من موہنیے ، مٹیارے۔۔
    نی تو نئیں جان دی ، پردیسیاں دے پیار نوں۔۔

ہیرو (جانی) ، ہیروئن (رانی) کو متاثر کرنے میں کامیاب رہتا ہے۔ محبت کی آگ اس کے دل میں بھڑکنے لگتی ہے جس کی آنچ میں اس کے دن کا چین اور رات کا سکون تک غارت ہوجاتا ہے۔ بالآخر رانی ( سورن لتا) اقرار محبت کرتے ہوئے دل کی بات کہنے پر مجبور ہو جاتی ہے۔ اس موقع پر پاکستانی فلموں کا پہلا سپرہٹ سولو گیت تخلیق ہوتا ہے جو منور سلطانہ کی آواز میں ایک بار پھر بابا چشتی کی دھن اور بے ساختہ عوامی شاعری کا شاہکار ہوتا ہے:

  • مینوں رب دی سونہہ تیرے نال پیار ہوگیا ، وے چناں سچی مچی۔۔
    تیری یاد وچ دل بے قرار ہوگیا ، وے چناں سچی مچی۔۔

محبت کی شدت میں اضافہ ہوجاتا ہے اور محبوب کی دید کی خواہش شدید تر ہو جاتی ہے۔ ایسے میں بابا عالم سیاہ پوش کا لکھا ہوا یہ خوبصورت گیت منور سلطانہ کی آواز میں سورن لتا پر فلمایا جاتا ہے:

  • تاریاں دی چھاویں چھاویں ، آجا ، لک چھپ جانی ، چوری چوری آجا۔۔

عشق اور مشک چھپائے نہیں چھپتے۔ اب ہیر رانجھا جیسے عاشق ہوں اور ان میں کیدو جیسا ولن نہ ہو ، بھلا یہ کیسے ممکن ہے؟

رانی ( سورن لتا) کا بھائی راجو (علاؤالدین) ولن بن کر سامنے آجاتا ہے۔ چند ایک بار جانی (نذیر) کی پٹائی بھی کرتا ہے لیکن عاشق لوک سودائی بھلا مار پیٹ سے کب ڈرتے ہیں۔

اتفاق سے ایک میلے میں ایک گاؤں کا چوہدری لچھو (ایم اسماعیل) ، رانی کو دیکھ کر لٹو ہو جاتا ہے۔ مالدار آدمی کے لیے خواہشات کی تکمیل ویسے بھی بہت آسان ہوتی ہے۔ راجو ، اپنی بہن کی شادی چوہدری لچھو کے ساتھ کرنے پر فوراً راضی ہو جاتا ہے۔ ایسے میں بابا چشتی نے جو گیت اپنی بیوی کے انتقال پر لکھا ہوتا ہے ، وہ فلم کی ہیروئن پر فلمانے کا موقع مل جاتا ہے:

  • کی کیتا تقدیرے ، کیوں روڑ دتے دو ہیرے۔۔

بھائی (راجو) کے جبروتشدد کے باوجود بہن (رانی) ، اپنے ہونے والے دولہا (چوہدری لچھو) کے ساتھ ہندوآنہ نکاح کے سات "پھیرے" لینے کو تیار نہیں ہوتی تو خاندان کی عزت کی خاطر اس کی سہیلی لچھی (زینت) کو دلہن کا لباس پہنا کر پھیرے دلوا دیے جاتے ہیں۔ رخصتی ہوتی ہے تو سہیلی کو بھی ڈولی کے ساتھ بھیجا جاتا ہے۔ اس موقع پر بابا عالم سیاہ پوش کا لکھا ہوا اور بابا چشتی کا کمپوز کیا ہوا پاکستانی فلموں کا پہلا سپرہٹ مردانہ گیت عنایت حسین بھٹی کی آواز میں نذیر پر فلمایا جاتا ہے:

  • جے نئیں سی پیار نبھانا ، سانوں دس جا کوئی ٹھکانہ۔۔

سسرال جا کر رانی ، اپنے دولہا کو حیلوں بہانوں سے دور رکھتی ہے لیکن جلد ہی چوہدری لچھو پر یہ راز کھل جاتا ہے کہ اصل بات کیا ہے۔ وہ ، راجو کو شرمندہ کرتا ہے کہ اس نے اپنی بہن کو بغیر نکاح یا پھیروں کے اس کے ساتھ بھیج دیا تھا۔ اس لیے اب تجدید نکاح کے لیے پھیرے دوبارہ ہوں گے۔

ایک بارپھر شادی کی تقریب ہوتی ہے۔ رانی ( سورن لتا) کی حیرت اور خوشی کی انتہا ہو جاتی ہے جب پھیرے لگانے کے لیے اس کا محبوب جانی (نذیر) اس کے ساتھ ہوتا ہے۔ چوہدری لچھو (ایم اسماعیل) ، اپنی منکوحہ لچھی (زینت) پر قناعت کرتا ہے اور پاکستان کی پہلی پنجابی فلم کا خوشگوار اختتام ہو جاتا ہے۔

فلم پھیرے (1949) کے کردار ہندوآنہ ، کیوں؟

پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے (1949) کی کہانی دیگر بہت سی رومانٹک فلموں کی طرح کلاسک پنجابی ادبی شہ پارے "ہیر وارث شاہ" سے متاثر تھی۔ فرق صرف اتنا تھا کہ پاکستان کی اس پہلی پنجابی فلم کے سبھی کردار ہندوآنہ تھے۔

پاکستان کی ابتدائی دور کی بیشتر فلموں کے کردار ہندوآنہ ہوتے تھے جس کی بنیادی وجہ تو ایک ہی تھی کہ برصغیر کی فلموں کا سٹائل مکمل طور پر ہندوآنہ رہا ہے جو اکثریتی آبادی کی نمائندگی بھی کرتا تھا۔ گو پنجاب میں مسلمانوں کی اکثریت تھی لیکن فلم بینوں کی اکثریت ہندو/سکھ ہوتی تھی اور انھیں سامنے رکھ کر ہی فلمیں بنائی جاتی تھیں۔ مسلمانوں میں فلم دیکھنا معیوب سمجھا جاتا تھا۔ یہ فلم بھی اسی تناظر میں بنائی گئی تھی۔

فلم پھیرے (1949) کا پرنٹ دستیاب نہیں لیکن اس کے گیت یوٹیوب پر سننے کو ملتے ہیں۔



Jhumkay
Jhumkay
(1946)
Rehana
Rehana
(1946)
Maha Maya
Maha Maya
(1936)

Mubarak
Mubarak
(1941)
Farz
Farz
(1947)



241 فنکاروں پر معلوماتی مضامین




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan's political, film and media history.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes, and therefor, I am not responsible for the content of any external site.